1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔
  2. آئی ٹی استاد کے لیے ٹیم ممبرز کی ضرورت ہے خواہش مند ممبرز ایڈمن سے رابطہ کریں
    Dismiss Notice

ڈاک میں گُم شُدہ محبت

Discussion in 'Library' started by Ziaullah mangal, Dec 6, 2015.

Share This Page

  1. Ziaullah mangal
    Offline

    Ziaullah mangal Well Wishir
    • 18/8

    [​IMG]

    ڈاک میں گُم شُدہ محبت

    جب بھی رَتجگوں کی رُت آتی ہے ۔۔۔۔۔۔ مُجھے اُس چھٹی رَساں کا خط اور رِملا یاد آ جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ لوگ آج بھی اُس چھٹی رَساں کا ذکر ایک عجیب و غریب کہانی کی شکل میں کرتے ہیں اور یہ کہانی اُس وقت شروع ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ جب اُس چھٹی رَساں نے اپنے ریٹائر ہونے کے دُوسرے ہی دن اَخبار میں ایک اِشتہار دے دیا تھا ۔۔۔۔۔۔ اُس کا اِشتہار پڑھتے ہی کئی جوانی ڈھلے لوگوں نے اُس کے گھر کا رُخ کیا ۔۔۔۔۔۔ مگر کوئی بھی اُس بوڑھے چھٹی رَساں کو اُس خط کا مضمون نہ سُنا سکا جو آج سے ستائیس سال پیشتر کسی عاشق نے اپنی رِملا کو لکھا تھا ۔۔۔۔۔۔ خط بڑا جذباتی اور رُومانوی سا تھا اور اُس میں اُس لڑکی رِملا کی ایسے اَلفاظ میں منظر کشی کی گئی تھی کہ خط پڑھنے والے فورا ہی ایسی کسی لڑکی کے تصور میں کھو جائیں ۔۔۔۔۔ خط کے آخر میں ایسا کوئی نام و پتہ موجود نہیں تھا کہ جس سے خط لکھنے والے پہ روشنی ڈالی جا سکے ۔۔۔۔۔۔ اَلبتہ چھٹی رَساں اپنی زندگی میں کہا کرتا تھا کہ اِیسا خط کوئی بہت بڑا مضمون نگار لکھ سکتا ہے یا پھر اَفسانہ نگار ! چھٹی رَساں خط اپنے پاس رہ جانے کی وجہ اپنی تنخواہ بتاتا تھا ۔۔۔۔۔۔ اُس کا کہنا تھا کہ وہ ہر ?? پہلی ?? پر اِس خط پر ٹکٹ لگا کر پوسٹ کرنے کی سوچتا تھا مگر سرکار کی پالیسیاں ہمیشہ اُسے ایسا کرنے سے روک دیتی تھیں حتیٰ کہ ستائیس برس بیت گئے اور وہ اپنی بیالیس سالہ نوکری کے بعد ریٹائر بھی ہو گیا ۔۔۔۔۔ پس ریٹائر ہوتے ہی اُسے اُس خط کا خیال بھی آ گیا جو ستائیس برس سے اُس کے پاس محفوظ تھا ۔۔۔۔۔۔۔ بس یہ خیال آتے ہی اُس نے اِشتہار دینے میں دیر نہ لگائی ۔۔۔۔۔۔۔ چھٹی رَساں کے محلے داروں کا کہنا ہے کہ اُس کے اِشتہار نے محبت کی تلاش میں بھٹکنے والوں اور ہارے ہوئے لوگوں میں ایک ہلچل سی مچا دی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر کئی لوگ اپنی اپنی آنکھوں میں جنازے اور کاندھے پہ کفن ڈالے اُس کے پاس آئے اور اُس خط کا مطالبہ کیا ۔۔۔۔۔ جس کا اُس نے اَخبار میں اِشتہار دیا تھا ۔۔۔۔۔۔ اِس پہ چھٹی رَساں نے اُنہیں اُس خط کا مضمون سُنانے کو کہا اور یہ سُنتے ہی جب لوگوں کی پیشانی پہ سوچ کی شکنیں سی اُبھر آئیں تو اُس نے ہاتھ اُٹھا دیا اور کہا ۔۔۔۔ ?? تم سب جا سکتے ہو ۔۔۔۔۔ ?? چھٹی رَساں کے دفتر کے ساتھیوں کا کہنا ہے کہ ہم نے اُسے بہت سمجھایا کہ وہ کسی طرح اِس خط سے جان چھڑائے ۔۔۔۔۔۔ جس کسی کا بھی یہ خط ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اُسے دے آئے ۔۔۔۔۔۔۔۔ بھلا ستائیس برس پرانا مضمون بھی کسے یاد رہتا ہے ?? مگر اُس نے کسی کی نہیں سُنی اور کہنے لگا ۔۔۔۔۔۔ ?? یہ کیسے ہو سکتا ہے کہ خونِ دل سے لکھا ہوا خط کوئی بھول جائے ؟ ?? چھٹی رَساں کے عزیزوں نے اُس پہ کڑی نکتہ چینی کی تھی اور کہا تھا ۔۔۔۔۔ ?? ہو سکتا ہے ! وہ اَفسانہ نگار عاشق اور اُس کی رِملا دونوں مر گئے ہوں ۔۔۔۔۔۔ پھر تم کیوں پرائے لفظوں کا بوجھ اُٹھائے پھرتے ہو ؟ ?? اِس پہ پہلی بار اُس کی آنکھوں نے تھوڑی سوچ سی اُٹھا لی تھی اور پھر اُس نے کہا تھا ۔۔۔۔۔ ?? میں نے ساری زندگی سخت ایمانداری میں بسر کی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ صورتحال خواہ کُچھ بھی ہو ۔۔۔۔۔ میں یہ خط اُس کے وارثوں تک پہنچا کر دم لوں گا ۔۔۔۔۔ ?? بعد میں میری ملاقات چھٹی رَساں کے گہرے دوستوں سے بھی ہوئی ۔۔۔۔۔۔ اُنہوں نے بھی یہی کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ?? ہرچند وہ ایک ضدی اور اَنا پرست چھٹی رَساں تھا
    ۔۔۔۔ پھر بھی ہم نے اُسے سمجھایا ۔۔۔۔۔۔ چھوڑو! جانے بھی دو یار! بھلا ستائیس برس پرانا خط کس کے لیے اہم ہو سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ ابھی ہم نے اِتنا ہی کہا ہو گا کہ اُس کی آنکھوں نے ایک نامانوس سا فاصلہ تان لیا اور برسوں پرانی دوستی غیر اہم ہوتی چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اَفسانہ نگار عاشق کا اپنی رِملا کو لکھا خط اَفسانوی اہمیت اِختیار کرتا جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ مُجھے چھٹی رَساں کے دوستوں سے بھی اِجازت لینا پڑ گئی اور خود میں اُٹھ کر گھر آنے کے لیے بے چین ہو گیا ۔۔۔۔۔۔۔ گھر آ کر میں نے ماہم سے اَفسانہ نگار عاشق اور اُس کی رِملا کے خط کا ذکر کیا تو وہ کہنے لگی ۔۔۔۔۔ ?? ہاں! برسوں پہلے ایک ڈاکیے کا اِشتہار اَخبار میں چھپا تو تھا ۔۔۔۔۔۔۔ کسی خط کا ذکر تھا اُس میں ۔۔۔۔۔۔ ہاں یاد آیا! ایک لڑکی رِملا کا حوالہ بھی تھا ?? میں نے اپنے چہرے کے گرد سوچ کا ایک حلقہ سا بنا لیا اور کہا ۔۔۔۔۔۔ ?? وُہ چھٹی رَساں اب اِس دُنیا میں نہیں رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ورنہ میں اُس کا خط دیکھنے ضرور جاتا ۔۔۔۔۔۔ ?? اِتنا سُننا تھا کہ ماہم کی آنکھیں کُچھ شکی سی ہو گئیں ۔۔۔۔۔۔ تھوڑی دیر میں وہ کہہ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ?? وہ خط کسی نے بھی لکھا ہو ۔۔۔۔۔ پر آپ کیوں اِس قدر بے چین ہو رہے ہیں ؟ ?? میں نے ماتھے پہ آئے پسینے کو رُومال سے پونچھا اور کہا ۔۔۔۔۔۔۔ ?? وہ خط کسی کا بھی ہو ماہم! مگر میری دلچسپی تو صرف اُس کی تحریر سے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    دلکش اور دلنشیں اَنداز میں لکھے ہوئے پیراگراف میری کمزوری ہیں ?? اِتنا سُننا تھا کہ میری بیوی کی آنکھیں کُچھ بھر سی آئیں اور وہ روہانسی سی ہو کر کہنے لگی ۔۔۔۔۔ ?? آخر ایسا خط دیکھ کے آپ کو کیا ملے گا ؟ جو ہماری شادی سے پہلے ہی کسی نے کسی کو پوسٹ کر دیا تھا ?? میں نے اِس بار گُھور کر اُس کی طرف دیکھا اور کہا ۔۔۔۔۔ ?? دیکھو! تم ایک بار پہلے بھی مُجھے اُس شخص کی چھتری دیکھنے سے باز کر چکی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو ساون میں مر گیا تھا ۔۔۔۔۔ ?? چھتری کے ذکر پر اُس کی آنکھیں چھما چھم برس پڑیں اور تھوڑی دیر میں وہ ہچکیاں لیتے ہوئے کہہ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ?? مُجھے ڈر ہے! اُس چھتری کی طرح یہ خط بھی آپ ہی کا نہ ہو؟?? میں نے اِس بار جُھنجھلاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ ?? کیا بات کرتی ہو ماہم ؟ میں اَب مر کے ستائیس سال کا ہوا ہوں اور یہ واقعہ تو میری پیدائش سے بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ?? میں اَبھی اور اُونچا بولنے ہی والا تھا کہ اُس نے میری بات کاٹ دی اور مزید چڑ کر کہنے لگی ۔۔۔۔۔۔ ?? اَدیبوں کا کیا پتہ ؟ یہ لوگ آتے بعد میں ہیں ۔۔۔۔۔۔ نشانیاں اپنی پہلے بھیج دیتے ہیں ??

    اَفسانہ :۔ ڈاک میں گُم شُدہ محبت
    اَفسانہ نگار:۔ علی آریان

     
  2. Shakeel777
    Offline

    Shakeel777 ITU Winer
    • 3/8

    بہت عمدہ

    ? اَدیبوں کا کیا پتہ ؟ یہ لوگ آتے بعد میں ہیں ۔۔۔۔۔۔ نشانیاں اپنی پہلے بھیج دیتے ہیں ??
     
  3. Shahzaib Gohar
    Offline

    Shahzaib Gohar Moderator Staff Member
    • 28/33

    بہت خوب بھائی جان

    Sent from my QMobile X2i using Tapatalk
     

Share This Page