ﮨﻢ ﮐﮧ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﮧ ﻧﮧ ﻻﺋﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻭﯾﺮﺍﻧﯽ ﮐﻮ

Discussion in 'Poetry' started by Ahsaaan, Dec 7, 2015.

  1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔
  2. آئی ٹی استاد کے لیے ٹیم ممبرز کی ضرورت ہے خواہش مند ممبرز ایڈمن سے رابطہ کریں
    Dismiss Notice
  1. Ahsaaan
    Offline

    Ahsaaan Lover
    • 48/49

    ﮨﻢ ﮐﮧ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﮧ ﻧﮧ ﻻﺋﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻭﯾﺮﺍﻧﯽ ﮐﻮ

    ﮨﻢ ﮐﮧ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﮧ ﻧﮧ ﻻﺋﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻭﯾﺮﺍﻧﯽ ﮐﻮ
    ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﻧﮩﯿﮟﻇﺎﻟﻢ ﮐﯽ ﭘﺸﯿﻤﺎﻧﯽ ﮐﻮ

    ﮐﺎﺭِ ﻓﺮﮨﺎﺩ ﺳﮯ ﯾﮧ ﮐﻢ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟﺟﻮ ﮨﻢ ﻧﮯ
    ﺁﻧﮑﮫ ﺳﮯ ﺩﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﻮﮌ ﺩﯾﺎ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﻮ

    ﺷﯿﺸﮧﺀ ﺷﻮﻕ ﭘﮧ ﺗُﻮ ﺳﻨﮓِ ﻣﻼﻣﺖ ﻧﮧ ﮔﺮﺍ
    ﻋﮑﺲِ ﮔﻞ ﺭﻧﮓ ﮨﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﮯ ﮔﺮﺍﮞ ﺟﺎﻧﯽ ﮐﻮ

    ﺗُﻮ ﺭﮐﮯ ﯾﺎ ﻧﮧ ﺭﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺗﺠﮫ ﭘﺮ ﭼﮭﻮﮌﺍ
    ﺩﻝ ﻧﮯ ﺩﺭ ﮐﮭﻮﻝ ﺩﺋﯿﮯ ﮨﯿﮟﺗﺮﯼ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﮐﻮ

    ﺩﺍﻣﻦِ ﭼﺸﻢ ﻣﯿﮟ ﺗﺎﺭﺍ ﮨﮯ ﻧﮧ ﺟﮕﻨﻮ ﮐﻮﺋﯽ
    ﺩﯾﮑﮫ ﺍﮮ ﺩﻭﺳﺖ ﻣﺮﯼ ﺑﮯ ﺳﺮ ﻭ ﺳﺎﻣﺎﻧﯽ ﮐﻮ

    ﮨﺎﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺧﺒﻂ ﮨﮯ ﺳﻮﺩﺍ ﮨﮯ ﺟﻨﻮﮞ ﮨﮯ ﺷﺎﯾﺪ
    ﺩﮮ ﻟﻮ ﺟﻮ ﻧﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﭼﺎﮨﻮ ﻣﺮﯼ ﻧﺎﺩﺍﻧﯽ ﮐﻮ

    ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﮨﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﻧﮓِ ﻏﺰﻝ
    ﺳﻌﺪ ﺟﯽ ﺁﮒ ﻟﮕﮯ ﺍﯾﺴﯽ ﺯﺑﺎﮞ ﺩﺍﻧﯽ ﮐﻮ

     
  2. PRINCE SHAAN
    Offline

    PRINCE SHAAN Banned
      0/0

    Bohat khoob ............
     
  3. BlackSoul
    Online

    BlackSoul Guest

    [​IMG]
    [​IMG]
    آپکی مزید پوسٹ کا انتظا ر رہے گا۔
     
  4. Sadia Naz
    Offline

    Sadia Naz Banned
      0/0

    bohut achy bhai
     

Share This Page