1. السلام علیکم
    آئی ٹی استاد ڈاٹ کام وزٹ کرنے کا شکریہ۔ ہم آپکو خوش آمدید کہتے ہیں۔ فورم کے کسی بھی حصے کو استعمال میں لانے جیسے پوسٹنگ کرنے، کوئی تھریڈ دیکھنے یا لکھنے کسی بھی ممبر سے رابطہ کرنے کے لئے اور فورم کے دیگر آلات وغیرہ کا استعمال کرنے کے لئے آپکا رجسٹر ہونا ضروری ہے۔ رجسٹر ہونے کے لئے یہاں کلک کریں۔ رجسٹریشن حاصل کرنا بالکل آسان اور بالکل مفت ہے۔
  2. آئی ٹی استاد کے لیے ٹیم ممبرز کی ضرورت ہے خواہش مند ممبرز ایڈمن سے رابطہ کریں
    Dismiss Notice

وہ اسباب جن کی وجہ سے لوگ حق نہیں مانتے

Discussion in 'General Topics Of Islam' started by IQBAL HASSAN, May 26, 2017.

Share This Page

  1. IQBAL HASSAN
    Offline

    IQBAL HASSAN Designer
    • 83/98


    ●▬▬▬▬▬▬▬▬ஜ۩۞۩ஜ▬▬▬ ▬▬▬▬●

    وہ اسباب جن کی وجہ سے لوگ حق نہیں مانتے
    ●▬▬▬▬▬▬▬▬ஜ۩۞۩ஜ▬▬▬ ▬▬▬▬●



    الحمد للہ والصلوۃ و السلام علی رسول اللہ، وبعد

    بے شک اللہ عزوجل نے مخلوق کو فطرت پر تخلیق فرمایا جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:
    فِطْرَتَ اللہِ الَّتِیْ فَطَرَ النَّاسَ عَلَیْھَا
    ‘‘یہی فطرت الٰہی ہے جس پر اس نے لوگوں کو پیدا فرمایا۔’’(الروم: ۳۰)
    لوگوں کی سرشت میں یہ بات ودیعت کر دی گئی ہے کہ وہ حق سے محبت وارادت رکھتے ہیں۔
    شیخ الاسلام ابن تیمیہ رحمہ اللہ فرماتے ہیں:‘‘دل ایک ایسی خلق (خلقت ) ہے جو حق کو پسند کرتا ہے، اسے چاہتا اور تلاش کرتا ہے۔’’ (مجموع الفتاوی۱۰؍۸۸)

    انہوں نے مزید فرمایا:‘‘ بے شک حق فطرت میں محبوب و پسندیدہ ہے، وہ اسے سب سے زیادہ محبوب ہے اور اس میں اس کی بہت زیادہ شان و شوکت ہے اور اسے باطل کی نسبت انتہائی خوشگوار ہے کیونکہ باطل تو ایسی چیز ہے جس کی کوئی حقیقت ہی نہیں، اس لئے فطرت اسے پسند نہیں کرتی’’۔(مجموع الفتاوی۱۶؍۳۳۸)

    مزید یہ کہ وہ محبت حق کی وجہ سے نفوس میں مرکوز ہے، کیوں کہ نفوس کو معرفت حق پر پیدا کیا گیا ہے،
    جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے موسیٰ علیہ السلام کے متعلق فرمایا:رَبُّنَا الَّذِیْ اَعْطٰی کُلَّ شَیْ ءٍ خَلْقَہٗ ثُمَّ ھَدٰی‘‘ہمارا رب وہ ہے جس نے ہر چیز کو صورت و شکل بخشی، پھر رہنمائی فرمائی۔’’(طہ: ۵۰)

    جیسا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: الإثم ما حاک فی صدرک و کرھت ان یطلع علیہ الناس‘‘جو چیز تیرے دل میں کھٹکھے اور اس پر لوگوں کا مطلع ہو جانا تجھے ناپسند ہو تو وہ گناہ ہے۔’’(مسلم البروالصلۃ والآداب، باب تفسیر البروالاثم، حدیث۲۵۵۳)

    شیخ الاسلام ابن تیمیہ رحمہ اللہ نے فرمایا:‘‘نفس میں ایسی کوئی چیز ہے جو اعتقادات وارادات میں حق کو باطل پر ترجیح دینے کا موجب بنتی ہے، اور اس بارے میں یہی کافی ہے کہ اس کی تخلیق فطرت پر کی گئی ہے۔’’ (در ء تعارض العقل و النقل:۸؍۴۶۳)

    انہوں نے مزید فرمایا:
    ‘‘ اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے اپنے بندوں کو ایسی فطرت پر پیدا فرمایا ہے جس میں حق اور اس کی تصدیق ، باطل کی معرفت اور اس کی تکذیب ، نفع مند چیز کی معرفت اور اس سے محبت اور نقصان دہ چیز سے معرفت اور اس سے بغض فطری طور پر ودیعت کر دیا گیا ہے۔’’ (در ء تعارض العقل و النقل:۸؍۴۶۳)

    پس جو حق موجود ہو تو فطرت اس کی تصدیق کرتی ہے، جو حق نافع ہو تو فطرت اس کی معرفت حاصل کرتی، اس سے محبت کرتی اور اس پر مطمئن ہوتی ہے، اور یہی وہ معروف (طریقہ) ہے ، جبکہ باطل معدوم ہو تو فطرت اس کی تکذیب کرتی ہے اور فطرت اس سے بغض رکھتی ہے اور اسے ناپسند کرتی ہے۔
    اللہ تعالیٰ نے فرمایا:یَاْ مُرُھُمْ بِالْمَعْرُوْفِ وَیَنْھٰھُمْ عَنِ الْمُنْکَرِ‘‘وہ انہیں نیکی(کے کام کرنے ) کا حکم دیتے ہیں اور انہیں برے کاموں سے دور رکھتے ہیں۔’’(الاعراف:۱۵۷)

    اور یہ معرفت حق، اس کی ارادت و محبت کے بارے میں جو چیز مرکوز ہے اس کی تائید شاید شریعت سے ہوتی ہے۔ جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:اَفَمَنْ کَانَ عَلیٰ بَیِّنَۃٍ مِّنْ رَّبِّہِ وَیَتْلُوْہُ شَاھد‘’ مِّنْہُ ‘‘بھلا وہ شخص جو اپنے رب کے کھلے راستے پر ہو اور اس کے پاس اللہ کی جانب سے شہادت بھی ہو۔’’(ھود:۱۷)

    پس ((البینۃ)) سے ‘‘وحی’’ مراد ہے جسے اللہ تعالیٰ نے نازل فرمایا۔ جبکہ‘‘شاہد’’ سے فطرت مستقیمہ اور عقل صریح کا شاہد مراد ہے۔(تیسیر الکریم الرحمن:ص۳۷۹)

    علامہ عبدالرحمن السعدی نے فرمایا:

    ‘‘پس دین، اس حکمت کا دین ہے جو ہر چیز میں درست بات کی معرفت اور اس پر عمل کرنا اور حق کی معرفت اور حق پر عمل کرنا ہے۔’’ (تیسیر اللطیف المنان : ص۵۰)


    اور نفوس جب فطرت پر باقی و قائم رہتے ہیں تو وہ صرف حق تلاش کرتے ہیں، جبکہ حق ایسا واضح اور بین ہے جس میں کسی قسم کا ابہام نہیں۔

    (سیدنا)معاذ بن جبل رضی اللہ عنہ نے فرمایا: ‘‘بے شک حق پر نور ہوتا ہے۔’(مستدرک حاکم۴؍۴۶۰، اور انہوأ نے فرمایا: یہ حدیث امام بخاری اور امام مسلم رحمہما اللہ کی شرط پر ہے۔ نیز امام ذہبی نے ان کی موافقت کی ہے)


    سیدنا عبداللہ بن سلام رضی اللہ عنہ پہلے یہودی تھے، پس جب نبی صلی اللہ علیہ وسلم ہجرت فرما کر مدینہ تشریف لائے اور انہوں نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت کی تو فوراً جان گئے کہ اپ کا چہرہ کسی صادق شخصیت کا(ہی) چہرہ ہے۔ (سیدنا) عبداللہ بن سلام رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں، جب نبی صلی اللہ علیہ وسلم مدینہ تشریف لائے تو (بعض) لوگ آپ کے قریب نہیں آتے تھے اور میں بھی انہی میں سے تھا، لیکن جب آپ کا چہرہ مبارک دیکھا تو میں نے پہچان لیا کہ آپ کا چہرہ مبارک کسی کذاب شخص کا چہرہ نہیں ، میں نے آپ کو پہلی مرتبہ یہ فرماتے ہوئے سنا:‘‘ افشو السلام و اطعموا الطعام وصلو الارحام، وصلو و الناس نیام تدخلو الجنۃ بسلام’’ ‘‘سلام پھیلاؤ ، کھانا کھلاؤ، صلہ رحمی کرو اور نماز (تہجد) پڑھو جبکہ لوگ سو رہے ہوں اور تم سلامتی کے ساتھ جنت میں داخل ہو جاؤگے۔’’(مسند احمد:۵؍۴۵۱ح۲۴۱۹۳،ترمذی ، صفۃ القیامۃ، باب: ۱۱، حدیث رقم: ۲۴۸۴وقال:‘‘ھذاحدیث حسن غریب من ھذاالوجہ’’)
    اور اللہ عزوجل مخلوق پر حجت قائم کرنے، انبیاء علیہم السلام مبعوث کرنے اور ظہورِ حق کے ساتھ ساتھ اپنی حکمت سے جسے چاہتا ہے گمراہ کر دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے ہدایت عطا فرما دیتا ہے۔ بندےپر واجب ہے کہ وہ فطرت سے التزام رکھے اور ایسے اسباب سے بچے جو اسے حق سے روکیں اور اس سے دور کریں، اور جب کوئی صارف (دور کرنے والا) اسے حق سے دور کرے اور وہ شخص پھر حق کی طرف پلٹ آئے اور اس سے التزام کر لے (یعنی چمٹ جائے) ، تو یہ اللہ تعالیٰ کا اپنے بندوں پر بہت بڑا انعام و احسان ہے کہ بندہ حق سے محبت رکھتا ہو، اسے اختیار کرتاہو اور اسے تلاش کر کے اس کے ساتھ التزام رکھتا ہو۔

    ابو محمد ابن حزم رحمہ اللہ نے فرمایا:

    ‘‘اللہ تعالیٰ کا بندے پر سب سے بڑا انعام و احسان یہ ہے کہ وہ اسے عدل و حق کا خوگر اور ان کی محبت و ایثار سے مانوس کر دے۔(‘‘مداواۃ النفوس’’ ص۳۱)
    لزوم حق کا یہ سبب ہے کہ ان اسباب کی معرفت حاصل کی جائے جو اتباع حق سے روکتے ہیں، لہذا حق سے دور کرنے والے اسباب کے متعلق چند گزارشات پیش خدمت ہیں۔ پس انہیں پہچاننے اور ان سے بچنے کی کوشش کرنی چاہیئے، میں اللہ عزوجل سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ ہمیں اہل حق اور داعیان حق بنا دے، اور ضلالت و گمراہی میں آگے بڑھنے والے اسباب و طرق سے ہمیں بچائے۔


    اس بات کی طرف اشارہ کرنا مناسب ہو گا کہ میں نے اس کے بیان کرنے اور اکٹھا کرنے میں کسی خاص معنی کو مدنظر نہیں رکھا جو سوء قصد، جہل اور ظلم کی طرف راجع ہو۔ واللہ اعلم
     
    PakArt likes this.
  2. PakArt
    Offline

    PakArt May Allah bless all Martyre of Pakistan
    • 83/98

Share This Page